ہری بھری اک شاخ بدن پر

امجد اسلام امجد

ہری بھری اک شاخ بدن پر

امجد اسلام امجد

MORE BYامجد اسلام امجد

    ہری بھری اک شاخ بدن پر

    میرے لبوں کے لمس سے پھوٹے

    ایسے ایسے پھول

    سادہ سے ملبوس میں بھی وہ ساتوں رنگ کھلاتی ہے

    اپنے حسن کی تیز مہک سے

    لوگوں کے انبوہ میں بیٹھی یوں گھبرا سی جاتی ہے

    جیسے باتیں کرتے کوئی!

    جاتا ہے کچھ بھول

    میرے لبوں کے لمس سے پھوٹے

    ہری بھری ایک شاخ بدن پر

    کیسے کیسے پھول

    مأخذ :
    • کتاب : Jalta Hai Badan (Pg. 26)
    • Author : Zahid Hasan
    • مطبع : Apnaidara, Lahore (2002)
    • اشاعت : 2002

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY