موم پگھلاتا رہا تیرا خیال

رخسانہ نور

موم پگھلاتا رہا تیرا خیال

رخسانہ نور

MORE BYرخسانہ نور

    کیا سلگتی رات ہے میرے ندیم

    آتشیں شورش زدہ تیرے خیال

    تو کہ کوسوں دور مجھ سے پر یقین

    تو یہیں پاس میرے ہے کہیں

    رنگ ہے کہ نور کی برسات ہے

    چاندنی اور پیار کی کومل صدا

    تیرے سانسوں کی مہک پھیلی ہوئی

    کتنی گڈمڈ ہو گئی ہیں دھڑکنیں

    لاکھ میں نے باندھ کے رکھا بدن

    تیری نظروں سے جو پگھلا موم تھا

    روح کو لذت تمہارے قرب میں

    اور آنکھوں میں تیرا منظر رہا

    رات کتنے کرب میں ڈھلتی رہی

    موم پگھلاتا رہا تیرا خیال

    میں کہ میرے جسم کا ہر ساز تو

    تو کہ تیری بے نیازی

    کیا کہوں!!

    مأخذ :
    • کتاب : Jalta Hai Badan (Pg. 43)
    • Author : Zahid Hasan
    • مطبع : Apnaidara, Lahore (2002)
    • اشاعت : 2002

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY