اک اور گھر بھی تھا مرا

منیر نیازی

اک اور گھر بھی تھا مرا

منیر نیازی

MORE BYمنیر نیازی

    اک اور گھر بھی تھا مرا

    جس میں میں رہتا تھا کبھی

    اک اور کنبہ تھا مرا

    بچوں بڑوں کے درمیاں

    اک اور ہستی تھی مری

    کچھ رنج تھے کچھ خواب تھے

    موجود ہیں جو آج بھی

    وہ گھر جو تھی بستی مری

    یہ گھر جو ہے بستی مری

    اس میں بھی تھی ہستی مری

    اس میں بھی ہے ہستی مری

    اور میں ہوں جیسے کوئی شے

    دو بستیوں میں اجنبی

    مأخذ :
    • کتاب : kulliyat-e-muniir niyaazii (Pg. 756)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY