تاج محل

بسمل عارفی

تاج محل

بسمل عارفی

MORE BYبسمل عارفی

    آگرہ شہر میں محبت کا

    ایک مینار جگمگاتا ہے

    لوگ کہتے ہیں جس کو تاج محل

    میرے دل کو بہت لبھاتا ہے

    روشنی پھوٹتی ہے جالی سے

    باغ میں پھول مسکراتے ہیں

    لوگ پہلو میں بیٹھ کر اس کے

    ہائے کتنا سکون پاتے ہیں

    روح جس میں نہیں پہ ہے زندہ

    تم نہ مانو مگر حقیقت ہے

    وقت دھندلا نہ کر سکا جس کو

    یہ محبت کی وہ عمارت ہے

    کرۂ ارض پر عجوبہ ہے

    کیسے انکار ہو ودیعت سے

    فخر ہندوستاں کو ہے اس پر

    تاج کو دیکھیے عقیدت سے

    دیکھنا ہو کبھی تو آ جانا

    درس وہ کس طرح سے دیتے ہیں

    چاہنے والے تاج میں بسملؔ

    عکس محبوب دیکھ لیتے ہیں

    مأخذ :
    • کتاب : مرے تصور میں رنگ بھردو (Pg. 107)
    • Author : بسمل عارفی
    • مطبع : نور پبلی کیشن، دریا گنج،نئی دہلی (2019)

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY