بازگشت

محمود ایاز

بازگشت

محمود ایاز

MORE BYمحمود ایاز

    خامشی رینگتی ہے راہوں پر

    ایک افسوں بہ دوش خواب لیے

    رات رک رک کے سانس لیتی ہے

    اپنی ظلمت کا بوجھ اٹھائے ہوئے

    مضمحل چاند کی شعاعوں میں

    بیتے لمحوں کی یاد رقصاں ہے

    جانے کن ماہ و سال کا سایہ

    وقت کی آہٹوں پہ لرزاں ہے

    ایک یاد اک تصور رفتہ

    سینۂ ماہ سے ابھرتا ہے

    ہے یہ سرشاریٔ حیات کا رنگ

    درد کن منزلوں سے گزرا ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق,

    نعمان شوق

    بازگشت نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY