فرحت ندیم ہمایوں

غزل 12

اشعار 7

نہیں ہوتی ہے راہ عشق میں آسان منزل

سفر میں بھی تو صدیوں کی مسافت چاہئے ہے

ترا دیدار ہو آنکھیں کسی بھی سمت دیکھیں

سو ہر چہرے میں اب تیری شباہت چاہئے ہے

میرا ہر خواب تو بس خواب ہی جیسا نکلا

کیا کسی خواب کی تعبیر بھی ہو سکتی ہے

ملنا ہے اگر خود سے تو پھر دیر نہ کرنا

کھو جانے کا ڈر ہوتا ہے تاخیر میں لکھ دے

ڈھونڈیں گے ہر اک چیز میں جینے کی امنگیں

دل کی کسی خواہش کو بھی ماریں گے نہیں ہم

کتاب 1

 

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

بولیے