Irfan Ahmad mir's Photo'

عرفان احمد میر

1977 | سری نگر, ہندوستان

تصویری شاعری 1

وہ کیسے لوگ ہوتے ہیں جنہیں ہم دوست کہتے ہیں نہ کوئی خون کا رشتہ نہ کوئی ساتھ صدیوں کا مگر احساس اپنوں سا وہ انجانے دلاتے ہیں وہ کیسے لوگ ہوتے ہیں جنہیں ہم دوست کہتے ہیں خفا جب زندگی ہو تو وہ آ کے تھام لیتے ہیں رلا دیتی ہے جب دنیا تو آ کر مسکراتے ہیں وہ کیسے لوگ ہوتے ہیں جنہیں ہم دوست کہتے ہیں اکیلے راستے پہ جب میں کھو جاؤں تو ملتے ہیں سفر مشکل ہو کتنا بھی مگر وہ ساتھ جاتے ہیں وہ کیسے لوگ ہوتے ہیں جنہیں ہم دوست کہتے ہیں نظر کے پاس ہوں نہ ہوں مگر پھر بھی تسلی ہے وہی مہمان خوابوں کے جو دل کے پاس رہتے ہیں وہ کیسے لوگ ہوتے ہیں جنہیں ہم دوست کہتے ہیں مجھے مسرور کرتے ہیں وہ لمحے آج بھی عرفانؔ کہ جن میں دوستوں کے ساتھ کے پل یاد آتے ہیں وہ کیسے لوگ ہوتے ہیں جنہیں ہم دوست کہتے ہیں

 

"سری نگر" کے مزید شعرا

  • فاروق نازکی فاروق نازکی
  • حامدی کاشمیری حامدی کاشمیری
  • ایاز رسول نازکی ایاز رسول نازکی
  • شفق سوپوری شفق سوپوری
  • فرید پربتی فرید پربتی
  • رفیق راز رفیق راز