Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر
Sahir Ludhianvi's Photo'

ساحر لدھیانوی

1921 - 1980 | ممبئی, انڈیا

اہم ترین ترقی پسند شاعر اور مشہور نغمہ نگار۔ اپنی احتجاجی شاعری کے لئے مقبول

اہم ترین ترقی پسند شاعر اور مشہور نغمہ نگار۔ اپنی احتجاجی شاعری کے لئے مقبول

ساحر لدھیانوی کے ویڈیو

This video is playing from YouTube

ویڈیو کا زمرہ
کلام شاعر بہ زبان شاعر
وجہ_بے_رنگیٔ_گل_زار کہوں تو کیا ہو

ساحر لدھیانوی

کبھی کبھی

کبھی کبھی مرے دل میں خیال آتا ہے ساحر لدھیانوی

بہت گھٹن ہے کوئی صورت_بیاں نکلے

ساحر لدھیانوی

کبھی کبھی

کبھی کبھی مرے دل میں خیال آتا ہے ساحر لدھیانوی

ویڈیو کا زمرہ
دیگر

فہد

آؤ کہ کوئی خواب بنیں

آؤ کہ کوئی خواب بنیں آر۔ جے صائمہ

اے شریف انسانو

اے شریف انسانو نامعلوم

برباد_محبت کی دعا ساتھ لیے جا

برباد_محبت کی دعا ساتھ لیے جا محمد رفیع

خوبصورت موڑ

خوبصورت موڑ علی مینائی

دور رہ کر نہ کرو بات قریب آ جاؤ

دور رہ کر نہ کرو بات قریب آ جاؤ محمد رفیع

عورت نے جنم دیا مردوں کو مردوں نے اسے بازار دیا

عورت نے جنم دیا مردوں کو مردوں نے اسے بازار دیا لتا منگیشکر

نہ تو زمیں کے لئے ہے نہ آسماں کے لیے

نہ تو زمیں کے لئے ہے نہ آسماں کے لیے محمد رفیع

کبھی خود پہ کبھی حالات پہ رونا آیا

کبھی خود پہ کبھی حالات پہ رونا آیا محمد رفیع

انوپ جلوٹا

Urdu Studio

آج کی رات مرادوں کی برات آئی ہے

آج کی رات مرادوں کی برات آئی ہے محمد رفیع

اب آئیں یا نہ آئیں ادھر پوچھتے چلو

اب آئیں یا نہ آئیں ادھر پوچھتے چلو نامعلوم

اب کوئی گلشن نہ اجڑے اب وطن آزاد ہے

اب کوئی گلشن نہ اجڑے اب وطن آزاد ہے محمد رفیع

اپنا دل پیش کروں اپنی وفا پیش کروں

اپنا دل پیش کروں اپنی وفا پیش کروں بھارتھی وشواناتھن

اے شریف انسانو

اے شریف انسانو توصیف اختر

اے شریف انسانو

اے شریف انسانو ذوالفقار علی بخاری

بجھا دیے ہیں خود اپنے ہاتھوں محبتوں کے دیے جلا کے

بجھا دیے ہیں خود اپنے ہاتھوں محبتوں کے دیے جلا کے نامعلوم

برباد_محبت کی دعا ساتھ لیے جا

برباد_محبت کی دعا ساتھ لیے جا محمد رفیع

بھولے سے محبت کر بیٹھا، ناداں تھا بچارا، دل ہی تو ہے

بھولے سے محبت کر بیٹھا، ناداں تھا بچارا، دل ہی تو ہے مکیش

پونچھ کر اشک اپنی آنکھوں سے مسکراؤ تو کوئی بات بنے

پونچھ کر اشک اپنی آنکھوں سے مسکراؤ تو کوئی بات بنے محمد رفیع

تم اپنا رنج_و_غم اپنی پریشانی مجھے دے دو

تم اپنا رنج_و_غم اپنی پریشانی مجھے دے دو رادھکا چوپڑا

جب کبھی ان کی توجہ میں کمی پائی گئی

جب کبھی ان کی توجہ میں کمی پائی گئی محمد رفیع

جرم_الفت پہ ہمیں لوگ سزا دیتے ہیں

جرم_الفت پہ ہمیں لوگ سزا دیتے ہیں رادھکا چوپڑا

جو بات تجھ میں ہے تری تصویر میں نہیں

جو بات تجھ میں ہے تری تصویر میں نہیں محمد رفیع

جیون کے سفر میں راہی

جیون کے سفر میں راہی کشور کمار

چہرے پہ خوشی چھا جاتی ہے آنکھوں میں سرور آ جاتا ہے

چہرے پہ خوشی چھا جاتی ہے آنکھوں میں سرور آ جاتا ہے آشا بھوسلے

خوبصورت موڑ

خوبصورت موڑ مہیندر کپور

دیکھا ہے زندگی کو کچھ اتنا قریب سے

دیکھا ہے زندگی کو کچھ اتنا قریب سے کشور کمار

زندگی_بھر نہیں بھولے_گی وہ برسات کی رات

زندگی_بھر نہیں بھولے_گی وہ برسات کی رات محمد رفیع

سزا کا حال سنائیں جزا کی بات کریں

سزا کا حال سنائیں جزا کی بات کریں بھارتی وشوناتھن

سنسار سے بھاگے پھرتے ہو بھگوان کو تم کیا پاؤ_گے

سنسار سے بھاگے پھرتے ہو بھگوان کو تم کیا پاؤ_گے لتا منگیشکر

سنسار کی ہر شے کا اتنا ہی فسانہ ہے

سنسار کی ہر شے کا اتنا ہی فسانہ ہے نامعلوم

شرما کے یوں نہ دیکھ ادا کے مقام سے

شرما کے یوں نہ دیکھ ادا کے مقام سے محمد رفیع

غیروں پہ کرم اپنوں پہ ستم

غیروں پہ کرم اپنوں پہ ستم لتا منگیشکر

متاع_غیر

متاع_غیر Urdu Studio

ملتی ہے زندگی میں محبت کبھی کبھی

ملتی ہے زندگی میں محبت کبھی کبھی لتا منگیشکر

میں جاگوں ساری رین سجن تم سو جاؤ

میں جاگوں ساری رین سجن تم سو جاؤ لتا منگیشکر

میں زندگی کا ساتھ نبھاتا چلا گیا

میں زندگی کا ساتھ نبھاتا چلا گیا محمد رفیع

نظر سے دل میں سمانے والے مری محبت ترے لیے ہے

نظر سے دل میں سمانے والے مری محبت ترے لیے ہے آشا بھوسلے

کبھی خود پہ کبھی حالات پہ رونا آیا

کبھی خود پہ کبھی حالات پہ رونا آیا محمد رفیع

کبھی کبھی

کبھی کبھی سمیر کھیرا

کبھی کبھی

کبھی کبھی مکیش

ہوس_نصیب نظر کو کہیں قرار نہیں

ہوس_نصیب نظر کو کہیں قرار نہیں بھارتی وشوناتھن

یہ محلوں یہ تختوں یہ تاجوں کی دنیا

یہ محلوں یہ تختوں یہ تاجوں کی دنیا محمد رفیع

یہ وادیاں یہ فضائیں بلا رہی ہیں تمہیں

یہ وادیاں یہ فضائیں بلا رہی ہیں تمہیں محمد رفیع

کلام شاعر بہ زبان شاعر

دیگر

Recitation

Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

GET YOUR PASS
بولیے