Sarshar Siddiqui's Photo'

سرشار صدیقی

1926 - 2008 | پاکستان

سرشار صدیقی

غزل 10

نظم 4

 

اشعار 7

اجڑے ہیں کئی شہر، تو یہ شہر بسا ہے

یہ شہر بھی چھوڑا تو کدھر جاؤ گے لوگو

نیند ٹوٹی ہے تو احساس زیاں بھی جاگا

دھوپ دیوار سے آنگن میں اتر آئی ہے

اک کار محال کر رہا ہوں

زندہ ہوں کمال کر رہا ہوں

میں نے عبادتوں کو محبت بنا دیا

آنکھیں بتوں کے ساتھ رہیں دل خدا کے ساتھ

سرشارؔ میں نے عشق کے معنی بدل دیے

اس عاشقی میں پہلے نہ تھا وصل کا چلن

کتاب 6

 

متعلقہ شعرا

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

بولیے