aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

بات یہ ہے کہ کوئی بات پرانی بھی نہیں

خالد کرار

بات یہ ہے کہ کوئی بات پرانی بھی نہیں

خالد کرار

MORE BYخالد کرار

    بات یہ ہے کہ کوئی بات پرانی بھی نہیں

    اور اس خاک میں اب کوئی نشانی بھی نہیں

    یہ تو ظاہر میں تموج تھا بلا کا لیکن

    یہ بدن میرا جہاں کوئی روانی بھی نہیں

    یا تو اک موج بلا خیز ہے میری خاطر

    یا کہ مشکیزۂ جاں میں کہیں پانی بھی نہیں

    بات یہ ہے کہ سبھی بھائی مرے دشمن ہیں

    مسئلہ یہ ہے کہ میں یوسف ثانی بھی نہیں

    سچ تو یہ ہے کہ مرے پاس ہی درہم کم ہیں

    ورنہ اس شہر میں اس درجہ گرانی بھی نہیں

    سارے کردار ہیں انگشت بدنداں مجھ میں

    اب تو کہنے کو مرے پاس کہانی بھی نہیں

    ایک بے نام و نسب سچ مرا اظہار ہوا

    ورنہ الفاظ میں وہ سیل معانی بھی نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے