ہر زخم دل سے انجمن آرائی مانگ لو

حسن نجمی سکندرپوری

ہر زخم دل سے انجمن آرائی مانگ لو

حسن نجمی سکندرپوری

MORE BYحسن نجمی سکندرپوری

    ہر زخم دل سے انجمن آرائی مانگ لو

    پھر شہر پر ہجوم سے تنہائی مانگ لو

    موسم کا ظلم سہتے ہیں کس خامشی کے ساتھ

    تم پتھروں سے طرز شکیبائی مانگ لو

    حسن تعلقات کی جو یادگار تھے

    ماضی سے ایسے لمحوں کی رعنائی مانگ لو

    مانگو سمندروں سے نہ ساحل کی بھیک تم

    ہاں فکر و فن کے واسطے گہرائی مانگ لو

    سمجھو انہیں جو دیتے ہیں یہ مشورہ تمہیں

    نرگس سے ہاتھ جوڑ کے بینائی مانگ لو

    وہ سو کے جیوں ہی اٹھیں پہنچ جاؤ ان کے پاس

    اور ان سے انقلاب کی انگڑائی مانگ لو

    نجمیؔ سنا ہے تم پہ بھی موسم ہے مہرباں

    باد سموم سے کبھی پروائی مانگ لو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY