ہو کے خوش ناز ہم ایسوں کے اٹھانے والا

شاد عظیم آبادی

ہو کے خوش ناز ہم ایسوں کے اٹھانے والا

شاد عظیم آبادی

MORE BY شاد عظیم آبادی

    ہو کے خوش ناز ہم ایسوں کے اٹھانے والا

    کوئی باقی نہ رہا اگلے زمانے والا

    خواب تک میں بھی نظر آتا نہیں اے چشم

    میرے رو دینے پہ اشکوں کا بہانے والا

    آج کچھ شام سے چپ ہے دل محزوں کیا علم

    کیوں خفا ہے مرا راتوں کا جگانے والا

    بے خودی کیوں نہ ہو طاری کہ گیا سینے سے

    اشک خوں آٹھ پہر مجھ کو رلانے والا

    کب سمجھتا ہے کہ جینا بھی ہے آخر کوئی شے

    اپنی ہستی تری الفت میں مٹانے والا

    محتسب خوش ہے بہت توڑ کے خم ہائے شراب

    غم نہیں سر پہ سلامت ہے پلانے والا

    ہو گئے دیکھنے والے بھی جہاں سے نایاب

    اب دکھائے کسے حیراں ہے دکھانے والا

    تیرے بیمار محبت کی یہ حالت پہنچی

    کہ ہٹایا گیا تکیہ بھی سرہانے والا

    سامنا اس بت کافر کا ہے دیکھیں کیا ہو

    خود ہے ششدر مرا ایمان بچانے والا

    شادؔ اک بھیڑ لگی رہتی تھی جس گھر میں وہاں

    آنے والا ہے نہ اب کوئی نہ جانے والا

    مآخذ:

    • Book: Dewan-e-shad Azimabadi (Pg. 83)
    • Author: Shad Azimabadi
    • مطبع: Educational Publishing House (2005)
    • اشاعت: 2005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites