اک پرندہ ابھی اڑان میں ہے

امیر قزلباش

اک پرندہ ابھی اڑان میں ہے

امیر قزلباش

MORE BYامیر قزلباش

    اک پرندہ ابھی اڑان میں ہے

    تیر ہر شخص کی کمان میں ہے

    جس کو دیکھو وہی ہے چپ چپ سا

    جیسے ہر شخص امتحان میں ہے

    کھو چکے ہم یقین جیسی شے

    تو ابھی تک کسی گمان میں ہے

    زندگی سنگ دل سہی لیکن

    آئینہ بھی اسی چٹان میں ہے

    سربلندی نصیب ہو کیسے

    سرنگوں ہے کہ سائبان میں ہے

    خوف ہی خوف جاگتے سوتے

    کوئی آسیب اس مکان میں ہے

    آسرا دل کو اک امید کا ہے

    یہ ہوا کب سے بادبان میں ہے

    خود کو پایا نہ عمر بھر ہم نے

    کون ہے جو ہمارے دھیان میں ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    اک پرندہ ابھی اڑان میں ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY