کون صیاد ادھر بہر شکار آتا ہے

میاں داد خاں سیاح

کون صیاد ادھر بہر شکار آتا ہے

میاں داد خاں سیاح

MORE BYمیاں داد خاں سیاح

    کون صیاد ادھر بہر شکار آتا ہے

    طائر دل قفس تن میں جو گھبراتا ہے

    زلف مشکیں کا جو اس شوخ کے دھیان آتا ہے

    زخم سے سینۂ مجروح کا چر جاتا ہے

    ہجر میں موت بھی آئی نہ مجھے سچ ہے مثل

    وقت پر کون کسی کے کوئی کام آتا ہے

    اب تو اللہ ہے یاران وطن کا حافظ

    دشت میں جوش جنوں ہم کو لیے جاتا ہے

    ڈوب کر چاہ ذقن سینہ مرا دل نکلا

    قد آدم سے سوا آب نظر آتا ہے

    مژدہ اے دل کہ مسیحا نے دیا صاف جواب

    اب کوئی دم کو لبوں پر مرا دم آتا ہے

    تیغ سی چلتی ہے قاتل کی دم جنگ زباں

    صلح کا نام جو لیتا ہے تو ہکلاتا ہے

    طرۂ کاکل پیچاں رخ نورانی پر

    چشمۂ آئینہ میں سانپ سا لہراتا ہے

    شوق طوف حرم کوئے صنم کا دن رات

    صورت نقش قدم ٹھوکریں کھلواتا ہے

    دو بہ دو عاشق شیدا سے وہ ہوگا کیونکر

    آئینے میں بھی جو منہ دیکھتے شرماتا ہے

    سخت پچھتاتے ہیں ہم دے کے دل اس کو سیاحؔ

    اپنی افسوس جوانی پہ ہمیں آتا ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Miyadad Khan Saiyyah (Pg. 94)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY