خالی خالی رستوں پہ بے کراں اداسی ہے

ثروت زہرا

خالی خالی رستوں پہ بے کراں اداسی ہے

ثروت زہرا

MORE BYثروت زہرا

    خالی خالی رستوں پہ بے کراں اداسی ہے

    جسم کے تماشے میں روح پیاسی پیاسی ہے

    خواب اور تمنا کا کیا حساب رکھنا ہے

    خواہشیں ہیں صدیوں کی عمر تو ذرا سی ہے

    راہ و رسم رکھنے کے بعد ہم نے جانا ہے

    وہ جو آشنائی تھی وہ تو نا شناسی ہے

    ہم کسی نئے دن کا انتظار کرتے ہیں

    دن پرانے سورج کا شام باسی باسی ہے

    دیکھ کر تمہیں کوئی کس طرح سنبھل پائے

    سب حواس جاگے ہیں ایسی بد حواسی ہے

    زخم کے چھپانے کو ہم لباس لائے تھے

    شہر بھر کا کہنا ہے یہ تو خوں لباسی ہے

    RECITATIONS

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    Khali khali raston pe عذرا نقوی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY