لفظ کی بہتات اتنی نقد و فن میں آ گئی

کاوش بدری

لفظ کی بہتات اتنی نقد و فن میں آ گئی

کاوش بدری

MORE BY کاوش بدری

    لفظ کی بہتات اتنی نقد و فن میں آ گئی

    مسخ ہو کر صورت معنی سخن میں آ گئی

    نصف آنکھیں کھول کر ہی اس نے دیکھا تھا مجھے

    چلنے پھرنے کی سکت مفلوج تن میں آ گئی

    اب نہ وہ احباب زندہ ہیں نہ رسم الخط وہاں

    روٹھ کر اردو تو دہلی سے دکن میں آ گئی

    اس کے چہرے کا مجھے مردانہ پن اچھا لگا

    چاشنی نمکین سی سارے بدن میں آ گئی

    کیوں سپیرا پن ترے نینوں میں پیدا ہو گیا

    اس قدر شوخی کدھر سے بانکپن میں آ گئی

    ایک بوسہ ہونٹ پر پھیلا تبسم بن گیا

    جو حرارت تھی مری اس کے بدن میں آ گئی

    ایک وحشی صنف سے ہم نے شرافت سیکھ لی

    پنج تن کی لو غزل کی انجمن میں آ گئی

    خلد کی تصویر کاوشؔ ہو بہو کشمیر تھی

    لاش اس کی پیرہن سے خود کفن میں آ گئی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY