متاع درد کا خوگر مری تلاش میں ہے

حیدر علی جعفری

متاع درد کا خوگر مری تلاش میں ہے

حیدر علی جعفری

MORE BYحیدر علی جعفری

    متاع درد کا خوگر مری تلاش میں ہے

    کسی کا بھیجا پیمبر مری تلاش میں ہے

    ہوں میں ہی نقطۂ آغاز اختتام حصار

    ہر اک حصار کا محور مری تلاش میں ہے

    ملی ہے اوج خودی کو یقین محکم سے

    سنا ہے مرضیٔ داور مری تلاش میں ہے

    وہ ایک سعی جسے کہتے ہیں ہم سبھی ادراک

    وہ میرے جسم کے اندر مری تلاش میں ہے

    سبھی تو دوست ہیں کیوں شک عبث ہوا مجھ کو

    کسی کے ہاتھ کا پتھر مری تلاش میں ہے

    مرے خدا میں ہوں تجھ سے پناہ کا طالب

    مرے گناہوں کا لشکر مری تلاش میں ہے

    مرے ہی لمس سے غنچوں نے پائی شادابی

    چمن میں کھلتا گل تر مری تلاش میں ہے

    کہیں سے سن لیا ہے میری پیاس کا چرچا

    تبھی سے پیاسا سمندر مری تلاش میں ہے

    لگا ہے سوچنے عہد رواں کا مرحبؔ بھی

    بچوں گا کس طرح حیدرؔ مری تلاش میں ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY