پھینکتے سنگ صدا دریائے ویرانی میں ہم

احمد محفوظ

پھینکتے سنگ صدا دریائے ویرانی میں ہم

احمد محفوظ

MORE BYاحمد محفوظ

    پھینکتے سنگ صدا دریائے ویرانی میں ہم

    پھر ابھرتے دائرہ در دائرہ پانی میں ہم

    اک ذرا یوں ہی بسر کر لیں گراں جانی میں ہم

    پھر تمہیں شام و سحر رکھیں گے حیرانی میں ہم

    اک ہوا آخر اڑا ہی لے گئی گرد وجود

    سوچیے کیا خاک تھے اس کی نگہبانی میں ہم

    وہ تو کہئے دل کی کیفیت ہی آئینہ نہ تھی

    ورنہ کیا کیا دیکھتے اس گھر کی ویرانی میں ہم

    محو حیرت تھے کہ بے موسم ندی پایاب تھی

    بس کھڑے دیکھا کیے اترے نہیں پانی میں ہم

    اس سے ملنا اور بچھڑنا دیر تک پھر سوچنا

    کتنی دشواری کے ساتھ آئے تھے آسانی میں ہم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY