راحت جاں سے تو یہ دل کا وبال اچھا ہے

عدیم ہاشمی

راحت جاں سے تو یہ دل کا وبال اچھا ہے

عدیم ہاشمی

MORE BYعدیم ہاشمی

    راحت جاں سے تو یہ دل کا وبال اچھا ہے

    اس نے پوچھا تو ہے اتنا ترا حال اچھا ہے

    ماہ اچھا ہے بہت ہی نہ یہ سال اچھا ہے

    پھر بھی ہر ایک سے کہتا ہوں کہ حال اچھا ہے

    ترے آنے سے کوئی ہوش رہے یا نہ رہے

    اب تلک تو ترے بیمار کا حال اچھا ہے

    یہ بھی ممکن ہے تری بات ہی بن جائے کوئی

    اسے دے دے کوئی اچھی سی مثال اچھا ہے

    دائیں رخسار پہ آتش کی چمک وجہ جمال

    بائیں رخسار کی آغوش میں خال اچھا ہے

    آؤ پھر دل کے سمندر کی طرف لوٹ چلیں

    وہی پانی وہی مچھلی وہی جال اچھا ہے

    کوئی دینار نہ درہم نہ ریال اچھا ہے

    جو ضرورت میں ہو موجود وہ مال اچھا ہے

    کیوں پرکھتے ہو سوالوں سے جوابوں کو عدیمؔ

    ہونٹ اچھے ہوں تو سمجھو کہ سوال اچھا ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    راحت جاں سے تو یہ دل کا وبال اچھا ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY