سکھا دیا ہے زمانے نے بے بصر رہنا

وزیر آغا

سکھا دیا ہے زمانے نے بے بصر رہنا

وزیر آغا

MORE BYوزیر آغا

    سکھا دیا ہے زمانے نے بے بصر رہنا

    خبر کی آنچ میں جل کر بھی بے خبر رہنا

    سحر کی اوس سے کہنا کہ ایک پل تو رکے

    کہ ناپسند ہے ہم کو بھی خاک پر رہنا

    تمام عمر ہی گزری ہے دستکیں سنتے

    ہمیں تو راس نہ آیا خود اپنے گھر رہنا

    وہ خوش کلام ہے ایسا کہ اس کے پاس ہمیں

    طویل رہنا بھی لگتا ہے مختصر رہنا

    سفر عزیز ہوا کو مگر عزیز ہمیں

    مثال نکہت گل اس کا ہم سفر رہنا

    شجر پہ پھول تو آتے رہے بہت لیکن

    سمجھ میں آ نہ سکا اس کا بے ثمر رہنا

    عجیب طرز تکلم ہے اس کی آنکھوں کا

    خموش رہ کے بھی لفظوں کی دھار پر رہنا

    ورق ورق نہ سہی عمر رائیگاں میری

    ہوا کے ساتھ مگر تم نہ عمر بھر رہنا

    ذرا سی ٹھیس لگی اور گھر کو اوڑھ لیا

    کہاں گیا وہ تمہارا نگر نگر رہنا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    وزیر آغا

    وزیر آغا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY