طلسم زار شب ماہ میں گزر جائے

اعتبار ساجد

طلسم زار شب ماہ میں گزر جائے

اعتبار ساجد

MORE BYاعتبار ساجد

    طلسم زار شب ماہ میں گزر جائے

    اب اتنی رات گئے کون اپنے گھر جائے

    عجب نشہ ہے ترے قرب میں کہ جی چاہے

    یہ زندگی تری آغوش میں گزر جائے

    میں تیرے جسم میں کچھ اس طرح سما جاؤں

    کہ تیرا لمس مری روح میں اتر جائے

    مثال برگ خزاں ہے ہوا کی زد پہ یہ دل

    نہ جانے شاخ سے بچھڑے تو پھر کدھر جائے

    میں یوں اداس ہوں امشب کہ جیسے رنگ گلاب

    خزاں کی چاپ سے بے ساختہ اتر جائے

    ہوائے شام جدائی ہے اور غم لاحق

    نہ جانے جسم کی دیوار کب بکھر جائے

    اگر نہ شب کا سفر ہو ترے حصول کی شرط

    فروغ مہر ترا اعتبار مر جائے

    مآخذ :
    • کتاب : meyaar (Pg. 291)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY