یا رب مری حیات سے غم کا اثر نہ جائے

فنا نظامی کانپوری

یا رب مری حیات سے غم کا اثر نہ جائے

فنا نظامی کانپوری

MORE BYفنا نظامی کانپوری

    یا رب مری حیات سے غم کا اثر نہ جائے

    جب تک کسی کی زلف پریشاں سنور نہ جائے

    وہ آنکھ کیا جو عارض و رخ پر ٹھہر نہ جائے

    وہ جلوہ کیا جو دیدہ و دل میں اتر نہ جائے

    میرے جنوں کو زلف کے سائے سے دور رکھ

    رستے میں چھاؤں پا کے مسافر ٹھہر نہ جائے

    میں آج گلستاں میں بلا لوں بہار کو

    لیکن یہ چاہتا ہوں خزاں روٹھ کر نہ جائے

    پیدا ہوئے ہیں اب تو مسیحا نئے نئے

    بیمار اپنی موت سے پہلے ہی مر نہ جائے

    کر لی ہے توبہ اس لیے واعظ کے سامنے

    الزام تشنگی مرے ساقی کے سر نہ جائے

    ساقی پلا شراب مگر یہ رہے خیال

    آلام روزگار کا چہرہ اتر نہ جائے

    میں اس کے سامنے سے گزرتا ہوں اس لیے

    ترک تعلقات کا احساس مر نہ جائے

    مسرور دید حسن ہے اس واسطے فناؔ

    دنیا کے عیب پر کبھی میری نظر نہ جائے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    فنا نظامی کانپوری

    فنا نظامی کانپوری

    نعمان شوق

    یا رب مری حیات سے غم کا اثر نہ جائے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY