یوں تو آپس میں بگڑتے ہیں خفا ہوتے ہیں

مجروح سلطانپوری

یوں تو آپس میں بگڑتے ہیں خفا ہوتے ہیں

مجروح سلطانپوری

MORE BYمجروح سلطانپوری

    یوں تو آپس میں بگڑتے ہیں خفا ہوتے ہیں

    ملنے والے کہیں الفت میں جدا ہوتے ہیں

    ہیں زمانے میں عجب چیز محبت والے

    درد خود بنتے ہیں خود اپنی دوا ہوتے ہیں

    حال دل مجھ سے نہ پوچھو مری نظریں دیکھو

    راز دل کے تو نگاہوں سے ادا ہوتے ہیں

    ملنے کو یوں تو ملا کرتی ہیں سب سے آنکھیں

    دل کے آ جانے کے انداز جدا ہوتے ہیں

    ایسے ہنس ہنس کے نہ دیکھا کرو سب کی جانب

    لوگ ایسی ہی اداؤں پہ فدا ہوتے ہیں

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Majrooh Sultanpuri (Pg. 188)
    • Author : Majrooh sultanpri
    • مطبع : Alhamd Publications

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY