آہٹ بھی اگر کی تو تہہ ذات نہیں کی

جاوید ناصر

آہٹ بھی اگر کی تو تہہ ذات نہیں کی

جاوید ناصر

MORE BYجاوید ناصر

    آہٹ بھی اگر کی تو تہہ ذات نہیں کی

    لفظوں نے کئی دن سے کوئی بات نہیں کی

    اظہار نہ آنکھیں نہ تحکم نہ قرینہ

    لہجے نے بھی عرصے سے ملاقات نہیں کی

    اصرار تھا ماتھے پہ نہ آنکھوں میں نمی تھی

    تم نے تو رعایت بھی مرے ساتھ نہیں کی

    ترتیب دیا اس کے لیے شور انا کو

    ہم نے بھی کئی دن سے بہت رات نہیں کی

    دو چار ہواؤں کے قدم دھوپ کے چھینٹے

    جاویدؔ نے شعروں میں نئی بات نہیں کی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY