آلام روزگار کو آساں بنا دیا

اصغر گونڈوی

آلام روزگار کو آساں بنا دیا

اصغر گونڈوی

MORE BY اصغر گونڈوی

    آلام روزگار کو آساں بنا دیا

    جو غم ہوا اسے غم جاناں بنا دیا

    میں کامیاب دید بھی محروم دید بھی

    جلووں کے اژدہام نے حیراں بنا دیا

    یوں مسکرائے جان سی کلیوں میں پڑ گئی

    یوں لب کشا ہوئے کہ گلستاں بنا دیا

    کچھ شورشوں کی نذر ہوا خون عاشقاں

    کچھ جم کے رہ گیا اسے حرماں بنا دیا

    اے شیخ وہ بسیط حقیقت ہے کفر کی

    کچھ قید رسم نے جسے ایماں بنا دیا

    کچھ آگ دی ہوس میں تو تعمیر عشق کی

    جب خاک کر دیا اسے عرفاں بنا دیا

    کیا کیا قیود دہر میں ہیں اہل ہوش کے

    ایسی فضائے صاف کو زنداں بنا دیا

    اک برق تھی ضمیر میں فطرت کے موجزن

    آج اس کو حسن و عشق کا ساماں بنا دیا

    مجبورئ حیات میں راز حیات ہے

    زنداں کو میں نے روزن زنداں بنا دیا

    وہ شورشیں نظام جہاں جن کے دم سے ہے

    جب مختصر کیا انہیں انساں بنا دیا

    ہم اس نگاہ ناز کو سمجھے تھے نیشتر

    تم نے تو مسکرا کے رگ جاں بنا دیا

    بلبل بہ آہ و نالہ و گل مست رنگ و بو

    مجھ کو شہید رسم گلستاں بنا دیا

    کہتے ہیں اک فریب مسلسل ہے زندگی

    اس کو بھی وقف حسرت و حرماں بنا دیا

    عالم سے بے خبر بھی ہوں عالم میں بھی ہوں میں

    ساقی نے اس مقام کو آساں بنا دیا

    اس حسن کاروبار کو مستوں سے پوچھئے

    جس کو فریب ہوش نے عصیاں بنا دیا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    آلام روزگار کو آساں بنا دیا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY