آیا ذرا سی دیر رہا غل گیا بدن

فرحت احساس

آیا ذرا سی دیر رہا غل گیا بدن

فرحت احساس

MORE BYفرحت احساس

    آیا ذرا سی دیر رہا غل گیا بدن

    اپنی اڑائی خاک میں ہی رل گیا بدن

    خواہش تھی آبشار محبت میں غسل کی

    ہلکی سی اک پھوار میں ہی گھل گیا بدن

    زیر کمان دل تھا تو تھوڑی سی تھی امید

    اب تو ہمارے ہاتھ سے بالکل گیا بدن

    اب دیکھتا ہوں میں تو وہ اسباب ہی نہیں

    لگتا ہے راستے میں کہیں کھل گیا بدن

    میں نے بھی ایک دن اسے تاراج کر دیا

    مجھ کو ہلاک کرنے پہ جب تل گیا بدن

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY