اب جو اک حسرت جوانی ہے

میر تقی میر

اب جو اک حسرت جوانی ہے

میر تقی میر

MORE BYمیر تقی میر

    اب جو اک حسرت جوانی ہے

    عمر رفتہ کی یہ نشانی ہے

    رشک یوسف ہے آہ وقت عزیز

    عمر اک بار کاروانی ہے

    گریہ ہر وقت کا نہیں بے ہیچ

    دل میں کوئی غم نہانی ہے

    ہم قفس زاد قیدی ہیں ورنہ

    تا چمن ایک پرفشانی ہے

    اس کی شمشیر تیز ہے ہمدم

    مر رہیں گے جو زندگانی ہے

    غم و رنج و الم نکو یاں سے

    سب تمہاری ہی مہربانی ہے

    خاک تھی موجزن جہاں میں اور

    ہم کو دھوکا یہ تھا کہ پانی ہے

    یاں ہوئے میرؔ تم برابر خاک

    واں وہی ناز و سرگرانی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY