اپنے لہو میں زہر بھی خود گھولتا ہوں میں

عمران الحق چوہان

اپنے لہو میں زہر بھی خود گھولتا ہوں میں

عمران الحق چوہان

MORE BY عمران الحق چوہان

    اپنے لہو میں زہر بھی خود گھولتا ہوں میں

    سوز دروں کسی پہ نہیں کھولتا ہوں میں

    افلاک میری درد تہ جام میں ہیں گم

    تسبیح مہر و انجم و مہ رولتا ہوں میں

    کچھ نہ سمجھ کے اٹھ چلے سب میرے غم گسار

    جانے وہی کہ جس کی زباں بولتا ہوں میں

    کیا جانے شاخ وقت سے کس وقت گر پڑوں

    مانند برگ زرد ابھی ڈولتا ہوں میں

    بازار دل میں درد کا گاہک نہیں کوئی

    میزان آرزو میں زیاں تولتا ہوں میں

    عمرانؔ بوئے گل سے ہیں ناخن مہک اٹھے

    یہ کس حسیں کے بند قبا کھولتا ہوں میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY