اپنی انا کی آج بھی تسکین ہم نے کی

اقبال ساجد

اپنی انا کی آج بھی تسکین ہم نے کی

اقبال ساجد

MORE BY اقبال ساجد

    اپنی انا کی آج بھی تسکین ہم نے کی

    جی بھر کے اس کے حسن کی توہین ہم نے کی

    لہجے کی تیز دھار سے زخمی کیا اسے

    پیوست دل میں لفظ کی سنگین ہم نے کی

    لائے بروئے کار نہ حسن و جمال کو

    موقع تھا پھر بھی رات نہ رنگین ہم نے کی

    جی بھر کے دل کی موت پہ رونے دیا اسے

    پرسا دیا نہ صبر کی تلقین ہم نے کی

    دریا کی سیر کرنے اکیلے چلے گئے

    شام شفق کی آپ ہی تحسین ہم نے کی

    0
    COMMENT
    COMMENTS
    VIEW COMMENTS

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Favroite added successfully

    Favroite removed successfully