اپنی نظر میں بھی تو وہ اپنا نہیں رہا

غضنفر

اپنی نظر میں بھی تو وہ اپنا نہیں رہا

غضنفر

MORE BY غضنفر

    اپنی نظر میں بھی تو وہ اپنا نہیں رہا

    چہرے پہ آدمی کے ہے چہرہ چڑھا ہوا

    منظر تھا آنکھ بھی تھی تمنائے دید بھی

    لیکن کسی نے دید پہ پہرہ بٹھا دیا

    ایسا کریں کہ سارا سمندر اچھل پڑے

    کب تک یوں سطح آب پہ دیکھیں گے بلبلہ

    برسوں سے اک مکان میں رہتے ہیں ساتھ ساتھ

    لیکن ہمارے بیچ زمانوں کا فاصلہ

    مجمع تھا ڈگڈگی تھی مداری بھی تھا مگر

    حیرت ہے پھر بھی کوئی تماشا نہیں ہوا

    آنکھیں بجھی بجھی سی ہیں بازو تھکے تھکے

    ایسے میں کوئی تیر چلانے کا فائدہ

    وہ بے کسی کہ آنکھ کھلی تھی مری مگر

    ذوق نظر پہ جبر نے پہرہ بٹھا دیا

    مآخذ:

    • Book : Aank Mein Luknat (Pg. 98)
    • Author : Ghazanfar
    • مطبع : Maktaba Jamia Ltd (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY