اثر اس کو ذرا نہیں ہوتا

مومن خاں مومن

اثر اس کو ذرا نہیں ہوتا

مومن خاں مومن

MORE BYمومن خاں مومن

    اثر اس کو ذرا نہیں ہوتا

    رنج راحت فزا نہیں ہوتا

    بے وفا کہنے کی شکایت ہے

    تو بھی وعدہ وفا نہیں ہوتا

    ذکر اغیار سے ہوا معلوم

    حرف ناصح برا نہیں ہوتا

    کس کو ہے ذوق تلخ کامی لیک

    جنگ بن کچھ مزا نہیں ہوتا

    تم ہمارے کسی طرح نہ ہوئے

    ورنہ دنیا میں کیا نہیں ہوتا

    اس نے کیا جانے کیا کیا لے کر

    دل کسی کام کا نہیں ہوتا

    امتحاں کیجئے مرا جب تک

    شوق زور آزما نہیں ہوتا

    ایک دشمن کہ چرخ ہے نہ رہے

    تجھ سے یہ اے دعا نہیں ہوتا

    آہ طول امل ہے روز فزوں

    گرچہ اک مدعا نہیں ہوتا

    تم مرے پاس ہوتے ہو گویا

    جب کوئی دوسرا نہیں ہوتا

    حال دل یار کو لکھوں کیوں کر

    ہاتھ دل سے جدا نہیں ہوتا

    رحم بر خصم جان غیر نہ ہو

    سب کا دل ایک سا نہیں ہوتا

    دامن اس کا جو ہے دراز تو ہو

    دست عاشق رسا نہیں ہوتا

    چارۂ دل سوائے صبر نہیں

    سو تمہارے سوا نہیں ہوتا

    کیوں سنے عرض مضطرب مومنؔ

    صنم آخر خدا نہیں ہوتا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    فریدہ خانم

    فریدہ خانم

    غلام عباس

    غلام عباس

    ثریا

    ثریا

    RECITATIONS

    شمس الرحمن فاروقی

    شمس الرحمن فاروقی

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    شمس الرحمن فاروقی

    اثر اس کو ذرا نہیں ہوتا شمس الرحمن فاروقی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY