صبح کا جھرنا ہمیشہ ہنسنے والی عورتیں

بشیر بدر

صبح کا جھرنا ہمیشہ ہنسنے والی عورتیں

بشیر بدر

MORE BYبشیر بدر

    دلچسپ معلومات

    (کتاب، لکھنؤ)

    صبح کا جھرنا ہمیشہ ہنسنے والی عورتیں

    جھٹپٹے کی ندیاں خاموش گہری عورتیں

    معتدل کر دیتی ہیں یہ سرد موسم کا مزاج

    برف کے ٹیلوں پہ چڑھتی دھوپ جیسی عورتیں

    سبز نارنجی سنہری کھٹی میٹھی لڑکیاں

    بھاری جسموں والی ٹپکے آم جیسی عورتیں

    سڑکوں بازاروں مکانوں دفتروں میں رات دن

    لال نیلی سبز نیلی جلتی بجھتی عورتیں

    شہر میں اک باغ ہے اور باغ میں تالاب ہے

    تیرتی ہیں اس میں ساتوں رنگ والی عورتیں

    سیکڑوں ایسی دکانیں ہیں جہاں مل جائیں گی

    دھات کی پتھر کی شیشے کی ربڑ کی عورتیں

    منجمد ہیں برف میں کچھ آگ کے پیکر ابھی

    مقبروں کی چادریں ہیں پھول جیسی عورتیں

    ان کے اندر پک رہا ہے وقت کا آتش فشاں

    جن پہاڑوں کو ڈھکے ہیں برف جیسی عورتیں

    آنسوؤں کی طرح تارے گر رہے ہیں عرش سے

    رو رہی ہیں آسمانوں کی اکیلی عورتیں

    غور سے سورج نکلتے وقت دیکھو آسماں

    چومتی ہیں کس کا ماتھا اجلی لمبی عورتیں

    سبز سونے کے پہاڑوں پر قطار اندر قطار

    سر سے سر جوڑے کھڑی ہیں لمبی سیدھی عورتیں

    واقعی دونوں بہت مظلوم ہیں نقاد اور

    ماں کہے جانے کی حسرت میں سلگتی عورتیں

    مأخذ :
    • کتاب : 1971 ki Muntakhab Shayri (Pg. 68)
    • Author : Kumar Pashi, Prem Gopal Mittal
    • مطبع : P.K. Publishers, New Delhi (1972)
    • اشاعت : 1972

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY