بخت سے کوئی شکایت ہے نہ افلاک سے ہے

پروین شاکر

بخت سے کوئی شکایت ہے نہ افلاک سے ہے

پروین شاکر

MORE BY پروین شاکر

بخت سے کوئی شکایت ہے نہ افلاک سے ہے

یہی کیا کم ہے کہ نسبت مجھے اس خاک سے ہے

خواب میں بھی تجھے بھولوں تو روا رکھ مجھ سے

وہ رویہ جو ہوا کا خس و خاشاک سے ہے

بزم انجم میں قبا خاک کی پہنی میں نے

اور مری ساری فضیلت اسی پوشاک سے ہے

اتنی روشن ہے تری صبح کہ ہوتا ہے گماں

یہ اجالا تو کسی دیدۂ نمناک سے ہے

ہاتھ تو کاٹ دیے کوزہ گروں کے ہم نے

معجزے کی وہی امید مگر چاک سے ہے

ویڈیو

پروین شاکر

پروین شاکر

RECITATIONS

پروین شاکر

پروین شاکر

صبیحہ خان

صبیحہ خان

پروین شاکر

بخت سے کوئی شکایت ہے نہ افلاک سے ہے پروین شاکر

بخت سے کوئی شکایت ہے نہ افلاک سے ہے

0
COMMENT
COMMENTS
Start a conversation

Critique mode ON

Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

OKAY

SUBMIT CRITIQUE

نام

ای-میل

CRITIQUE

Thanks, for your feedback

Critique draft saved

EDIT DISCARD

Critique mode ON

TURN OFF

Discard saved critique?

CANCEL DISCARD

Additional information available

Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

OKAY

About this sher

Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

Close

rare Unpublished content

This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

OKAY
Rekhta

Favroite added successfully

Favroite removed successfully