بلاؤ اس کو زباں داں جو مظہریؔ کا ہو

جمیلؔ مظہری

بلاؤ اس کو زباں داں جو مظہریؔ کا ہو

جمیلؔ مظہری

MORE BY جمیلؔ مظہری

    بلاؤ اس کو زباں داں جو مظہریؔ کا ہو

    مگر ہے شرط کہ اکیسویں صدی کا ہو

    یقیں وہی ہے جو آغوش تیرگی میں ملے

    سواد وہم میں ہم سایہ روشنی کا ہو

    بتوں کو توڑ کے ایسا خدا بنانا کیا

    بتوں کی طرح جو ہم شکل آدمی کا ہو

    مرا غرور نہ کیوں ہو سرور سے خالی

    جب اس کے بھیس میں اک چور کم تری کا ہو

    بہت بجا ہے یہ مذہب کی موت پر ماتم

    مگر کوئی تو عزا دار شاعری کا ہو

    ہے وقت وہ کہ مسلم ہو آذری اس کی

    صنم کدوں میں صنم ذہن مظہریؔ کا ہو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY