چلمن سے جو دامن کے کنارے نکل آئے

نشور واحدی

چلمن سے جو دامن کے کنارے نکل آئے

نشور واحدی

MORE BY نشور واحدی

    چلمن سے جو دامن کے کنارے نکل آئے

    وارفتہ نگاہی کے سہارے نکل آئے

    پیمانہ بکف ساتھ تمہارے نکل آئے

    ہنگامۂ ہستی سے کنارے نکل آئے

    اک سادگی حسن کی معصوم ادائیں

    رنگین مضامیں کے اشارے نکل آئے

    دولت کا فلک توڑ کے عالم کی جبیں پر

    مزدور کی قسمت کے ستارے نکل آئے

    سب بھول گئے پیچ و خم ہوش میں رستہ

    اس راہ پہ کچھ عشق کے مارے نکل آئے

    سب ڈوب گئے تلخی ناکامی غم میں

    کچھ آپ کے دامن کے سہارے نکل آئے

    گستاخی باراں سے وہ پیراہن پر نم

    بھیگے ہوئے جلووں سے شرارے نکل آئے

    رخصت کے وہ آنسو وہ نگاہوں کی اداسی

    تھی شام مگر صبح کے تارے نکل آئے

    آنکھوں میں نظر آنے لگے خون کے آنسو

    اٹھو کہ بس اب سرخ ستارے نکل آئے

    رضواں سے بغاوت ہے نشورؔ اور مئے کوثر

    عقبیٰ میں بھی کچھ کام ہمارے نکل آئے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    چلمن سے جو دامن کے کنارے نکل آئے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY