درد ہو دل میں تو دوا کیجے

منظر لکھنوی

درد ہو دل میں تو دوا کیجے

منظر لکھنوی

MORE BYمنظر لکھنوی

    درد ہو دل میں تو دوا کیجے

    اور جو دل ہی نہ ہو تو کیا کیجے

    غم میں کچھ غم کا مشغلا کیجے

    درد کی درد سے دوا کیجے

    آپ اور عہد پر وفا کیجے

    توبہ توبہ خدا خدا کیجے

    دیکھتا ہوں جو حشر کے آثار

    اپنے تیور ملاحظہ کیجے

    نظر التفات بن گئی موت

    مری قسمت کو آپ کیا کیجے

    دیکھیے مقتضائے حال مریض

    اب دوا چھوڑیئے دوا کیجے

    چار دن کی حیات میں منظرؔ

    کیوں کسی سے بھی دل برا کیجے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY