درد منت کش دوا نہ ہوا

مرزا غالب

درد منت کش دوا نہ ہوا

مرزا غالب

MORE BYمرزا غالب

    درد منت کش دوا نہ ہوا

    میں نہ اچھا ہوا برا نہ ہوا

    جمع کرتے ہو کیوں رقیبوں کو

    اک تماشا ہوا گلہ نہ ہوا

    ہم کہاں قسمت آزمانے جائیں

    تو ہی جب خنجر آزما نہ ہوا

    کتنے شیریں ہیں تیرے لب کہ رقیب

    گالیاں کھا کے بے مزا نہ ہوا

    ہے خبر گرم ان کے آنے کی

    آج ہی گھر میں بوریا نہ ہوا

    کیا وہ نمرود کی خدائی تھی

    بندگی میں مرا بھلا نہ ہوا

    جان دی دی ہوئی اسی کی تھی

    حق تو یوں ہے کہ حق ادا نہ ہوا

    زخم گر دب گیا لہو نہ تھما

    کام گر رک گیا روا نہ ہوا

    رہزنی ہے کہ دل ستانی ہے

    لے کے دل دل ستاں روانہ ہوا

    کچھ تو پڑھیے کہ لوگ کہتے ہیں

    آج غالبؔ غزل سرا نہ ہوا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    گلزار

    گلزار

    محمد رفیع

    محمد رفیع

    جگجیت سنگھ

    جگجیت سنگھ

    نامعلوم

    نامعلوم

    بیگم اختر

    بیگم اختر

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    درد منت کش دوا نہ ہوا نعمان شوق

    مأخذ :
    • کتاب : Deewan-e-Ghalib Jadeed (Al-Maroof Ba Nuskha-e-Hameedia) (Pg. 193)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY