دل ہی تو ہے نہ سنگ و خشت درد سے بھر نہ آئے کیوں

مرزا غالب

دل ہی تو ہے نہ سنگ و خشت درد سے بھر نہ آئے کیوں

مرزا غالب

MORE BY مرزا غالب

    دل ہی تو ہے نہ سنگ و خشت درد سے بھر نہ آئے کیوں

    روئیں گے ہم ہزار بار کوئی ہمیں ستائے کیوں

    دیر نہیں حرم نہیں در نہیں آستاں نہیں

    بیٹھے ہیں رہ گزر پہ ہم غیر ہمیں اٹھائے کیوں

    جب وہ جمال دلفروز صورت مہر نیمروز

    آپ ہی ہو نظارہ سوز پردے میں منہ چھپائے کیوں

    دشنۂ غمزہ جاں ستاں ناوک ناز بے پناہ

    تیرا ہی عکس رخ سہی سامنے تیرے آئے کیوں

    قید حیات و بند غم اصل میں دونوں ایک ہیں

    موت سے پہلے آدمی غم سے نجات پائے کیوں

    حسن اور اس پہ حسن ظن رہ گئی بوالہوس کی شرم

    اپنے پہ اعتماد ہے غیر کو آزمائے کیوں

    واں وہ غرور عز و ناز یاں یہ حجاب پاس وضع

    راہ میں ہم ملیں کہاں بزم میں وہ بلائے کیوں

    ہاں وہ نہیں خدا پرست جاؤ وہ بے وفا سہی

    جس کو ہو دین و دل عزیز اس کی گلی میں جائے کیوں

    غالبؔ خستہ کے بغیر کون سے کام بند ہیں

    روئیے زار زار کیا کیجیے ہائے ہائے کیوں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    عابدہ پروین

    عابدہ پروین

    بیگم اختر

    بیگم اختر

    شیلی کپور

    شیلی کپور

    ذوالفقار علی بخاری

    ذوالفقار علی بخاری

    جگجیت سنگھ

    جگجیت سنگھ

    شفقت امانت علی

    شفقت امانت علی

    نامعلوم

    نامعلوم

    شمونا رائے بسواس

    شمونا رائے بسواس

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    شمس الرحمن فاروقی

    شمس الرحمن فاروقی

    نعمان شوق

    دل ہی تو ہے نہ سنگ و خشت درد سے بھر نہ آئے کیوں نعمان شوق

    مآخذ:

    • Book : Deewan-e-Ghalib Jadeed (Al-Maroof Ba Nuskha-e-Hameedia) (Pg. 287)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY