aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

دل کے رہنے کے لیے شہر خیالات نہیں

اختر سعید

دل کے رہنے کے لیے شہر خیالات نہیں

اختر سعید

MORE BYاختر سعید

    دل کے رہنے کے لیے شہر خیالات نہیں

    سر بہ سر ہے نفی اس میں کہیں اثبات نہیں

    رنج گر واں سے تو راحت بھی وہیں سے آوے

    کون کہتا ہے یہاں وحدت آیات نہیں

    مجھ سے کہتے ہیں حوائج سے سروکار نہ رکھ

    میری تعریف بجز قصۂ حاجات نہیں

    کوئی بتلاؤ شب و روز پہ کیا گزری ہے

    رات خاموش نہیں دن میں کوئی بات نہیں

    تھی فلاطوں کی جو جمہور سے رو گردانی

    ہم سمجھتے تھے خرافات خرافات نہیں

    دل سے گزرے کبھی دشمن کے لیے فکر ضرر

    وہ وطیرہ نہیں میرا مرے جذبات نہیں

    عہد بے مہر میں اک چال محبت بھی چلے

    شہہ میں بازی ہے مری گرچہ ابھی مات نہیں

    صاحبا دیکھنا حد سے نہ بڑھے یورش غم

    ناتواں دل ہے مرا خیمۂ سادات نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے