دل کی راہیں ڈھونڈنے جب ہم چلے

اختر سعید خان

دل کی راہیں ڈھونڈنے جب ہم چلے

اختر سعید خان

MORE BYاختر سعید خان

    دل کی راہیں ڈھونڈنے جب ہم چلے

    ہم سے آگے دیدۂ پر نم چلے

    تیز جھونکا بھی ہے دل کو ناگوار

    تم سے مس ہو کر ہوا کم کم چلے

    تھی کبھی یوں قدر دل اس بزم میں

    جیسے ہاتھوں ہاتھ جام جم چلے

    ہائے وہ عارض اور اس پر چشم نم

    گل پہ جیسے قطرۂ شبنم چلے

    آمد سیلاب کا وقفہ تھا وہ

    جس کو یہ جانا کہ آنسو تھم چلے

    کہتے ہیں گردش میں ہیں سات آسماں

    از سر نو قصۂ آدم چلے

    کھل ہی جائے گی کبھی دل کی کلی

    پھول برساتا ہوا موسم چلے

    بے ستوں چھت کے تلے اس دھوپ میں

    ڈھونڈنے کس کو یہ میرے غم چلے

    کون جینے کے لیے مرتا رہے

    لو، سنبھالو اپنی دنیا ہم چلے

    کچھ تو ہو اہل نظر کو پاس درد

    کچھ تو ذکر آبروئے غم چلے

    کچھ ادھورے خواب آنکھوں میں لیے

    ہم بھی اخترؔ درہم و برہم چلے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    دل کی راہیں ڈھونڈنے جب ہم چلے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY