دل اس سے لگا جس سے روٹھا بھی نہیں جاتا

شہرت بخاری

دل اس سے لگا جس سے روٹھا بھی نہیں جاتا

شہرت بخاری

MORE BY شہرت بخاری

    دل اس سے لگا جس سے روٹھا بھی نہیں جاتا

    کام اس سے پڑا جس کو چھوڑا بھی نہیں جاتا

    دن رات تڑپتا ہوں اب جس کی جدائی میں

    وہ سامنے آئے تو دیکھا بھی نہیں جاتا

    منزل پہ پہنچنے کی امید بندھے کیسے

    پاؤں بھی نہیں اٹھتے رستہ بھی نہیں جاتا

    یہ کون سی بستی ہے یہ کون سا موسم ہے

    سوچا بھی نہیں جاتا بولا بھی نہیں جاتا

    انگاروں کی منزل میں زنجیر بپا ہیں ہم

    ٹھہرا بھی نہیں جاتا بھاگا بھی نہیں جاتا

    اس مرتبہ چھائی ہے کچھ ایسی گھٹا جس سے

    کھلنا بھی نہیں ہوتا برسا بھی نہیں جاتا

    ہر حال میں اتنے بھی بے بس نہ ہوئے تھے ہم

    دلدل بھی نہیں لیکن نکلا بھی نہیں جاتا

    مر جاتے تھے غیروں کے کانٹا بھی جو چبھتا تھا

    خود قتل ہوئے لیکن رویا بھی نہیں جاتا

    کافر ہوں جو حسرت ہو جینے کی مگر شہرتؔ

    اس حال میں یاروں کو چھوڑا بھی نہیں جاتا

    ذریعہ:

    • Book: shab-e-aaina (Pg. 237)
    0
    COMMENT
    COMMENTS
    تبصرے دیکھیے

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed form your favorites