دنیائے تصور ہم آباد نہیں کرتے

فنا نظامی کانپوری

دنیائے تصور ہم آباد نہیں کرتے

فنا نظامی کانپوری

MORE BYفنا نظامی کانپوری

    دنیائے تصور ہم آباد نہیں کرتے

    یاد آتے ہو تم خود ہی ہم یاد نہیں کرتے

    وہ جور مسلسل سے باز آ تو گئے لیکن

    بے داد یہ کیا کم ہے بے داد نہیں کرتے

    ساحل کے تماشائی ہر ڈوبنے والے پر

    افسوس تو کرتے ہیں امداد نہیں کرتے

    کچھ درد کی شدت ہے کچھ پاس محبت ہے

    ہم آہ تو کرتے ہیں فریاد نہیں کرتے

    صحرا سے بہاروں کو لے آئے چمن والے

    اور اپنے گلستاں کو آباد نہیں کرتے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY