فریبوں سے نہ بہلے گا دل آشفتہ کام اپنا

محشر عنایتی

فریبوں سے نہ بہلے گا دل آشفتہ کام اپنا

محشر عنایتی

MORE BYمحشر عنایتی

    فریبوں سے نہ بہلے گا دل آشفتہ کام اپنا

    بظاہر مسکرا کر دیکھنے والے سلام اپنا

    کسی کی بزم کے حالات نے سمجھا دیا مجھ کو

    کہ جب ساقی نہیں اپنا تو مے اپنی نہ جام اپنا

    اگر اپنے دل بیتاب کو سمجھا لیا میں نے

    تو یہ کافر نگاہیں کر سکیں گی انتظام اپنا

    مکمل کر گیا جل کر حیات غم کو پروانہ

    اور اک ہم تھے کہ افسانہ بھی چھوڑا ناتمام اپنا

    جہان عشق میں ایسے مقاموں سے بھی گزرا ہوں

    کہ بعض اوقات خود کرنا پڑا ہے احترام اپنا

    میں دیوانہ سہی لیکن وہ خوش قسمت ہوں اے محشرؔ

    کہ دنیا کی زباں پر آ گیا ہے آج نام اپنا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY