فرشتوں سے بھی اچھا میں برا ہونے سے پہلے تھا

انور شعور

فرشتوں سے بھی اچھا میں برا ہونے سے پہلے تھا

انور شعور

MORE BY انور شعور

    فرشتوں سے بھی اچھا میں برا ہونے سے پہلے تھا

    وہ مجھ سے انتہائی خوش خفا ہونے سے پہلے تھا

    کیا کرتے تھے باتیں زندگی بھر ساتھ دینے کی

    مگر یہ حوصلہ ہم میں جدا ہونے سے پہلے تھا

    حقیقت سے خیال اچھا ہے بیداری سے خواب اچھا

    تصور میں وہ کیسا سامنا ہونے سے پہلے تھا

    اگر معدوم کو موجود کہنے میں تأمل ہے

    تو جو کچھ بھی یہاں ہے آج کیا ہونے سے پہلے تھا

    کسی بچھڑے ہوئے کا لوٹ آنا غیر ممکن ہے

    مجھے بھی یہ گماں اک تجربہ ہونے سے پہلے تھا

    شعورؔ اس سے ہمیں کیا انتہا کے بعد کیا ہوگا

    بہت ہوگا تو وہ جو ابتدا ہونے سے پہلے تھا

    0
    COMMENT
    COMMENTS
    VIEW COMMENTS

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Favroite added successfully

    Favroite removed successfully