غم حیات بھی آغوش حسن یار میں ہے

شکیل بدایونی

غم حیات بھی آغوش حسن یار میں ہے

شکیل بدایونی

MORE BY شکیل بدایونی

    غم حیات بھی آغوش حسن یار میں ہے

    یہ وہ خزاں ہے جو ڈوبی ہوئی بہار میں ہے

    اثر شراب کا عہد وفائے یار میں ہے

    قدم قدم پہ جو لغزش سی اعتبار میں ہے

    شگفتگئ دل کارواں کو کیا سمجھے

    وہ اک نگاہ جو الجھی ہوئی بہار میں ہے

    شکست حوصلۂ ضبط غم مجھے منظور

    چلے بھی آؤ کہ دل کب سے انتظار میں ہے

    یہ اضطراب کا عالم یہ شوق بے پایاں

    شکیلؔ آج بلا شبہ کوئے یار میں ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    غم حیات بھی آغوش حسن یار میں ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY