گو جوانی میں تھی کج رائی بہت

الطاف حسین حالی

گو جوانی میں تھی کج رائی بہت

الطاف حسین حالی

MORE BY الطاف حسین حالی

    گو جوانی میں تھی کج رائی بہت

    پر جوانی ہم کو یاد آئی بہت

    زیر برقع تو نے کیا دکھلا دیا

    جمع ہیں ہر سو تماشائی بہت

    ہٹ پہ اس کی اور پس جاتے ہیں دل

    راس ہے کچھ اس کو خود رائی بہت

    سرو یا گل آنکھ میں جچتے نہیں

    دل پہ ہے نقش اس کی رعنائی بہت

    چور تھا زخموں میں اور کہتا تھا دل

    راحت اس تکلیف میں پائی بہت

    آ رہی ہے چاہ یوسف سے صدا

    دوست یاں تھوڑے ہیں اور بھائی بہت

    وصل کے ہو ہو کے ساماں رہ گئے

    مینہ نہ برسا اور گھٹا چھائی بہت

    جاں نثاری پر وہ بول اٹھے مری

    ہیں فدائی کم تماشائی بہت

    ہم نے ہر ادنیٰ کو اعلیٰ کر دیا

    خاکساری اپنی کام آئی بہت

    کر دیا چپ واقعات دہر نے

    تھی کبھی ہم میں بھی گویائی بہت

    گھٹ گئیں خود تلخیاں ایام کی

    یا گئی کچھ بڑھ شکیبائی بہت

    ہم نہ کہتے تھے کہ حالیؔ چپ رہو

    راست گوئی میں ہے رسوائی بہت

    0
    COMMENT
    COMMENTS
    تبصرے دیکھیے

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites