غبار دشت یکسانی سے نکلا

کاشف حسین غائر

غبار دشت یکسانی سے نکلا

کاشف حسین غائر

MORE BYکاشف حسین غائر

    غبار دشت یکسانی سے نکلا

    یہ رستہ میری بے دھیانی سے نکلا

    نہ ہم وحشت میں اپنے گھر سے نکلے

    نہ صحرا اپنی ویرانی سے نکلا

    نہ نکلا کام کوئی ضبط غم سے

    نہ اشکوں کی فراوانی سے نکلا

    نہ آنکھیں ہی ہوئیں غرقاب دریا

    نہ کوئی عکس ہی پانی سے نکلا

    ادھر نکلی وہ خوشبو شہر گل سے

    ادھر میں باغ ویرانی سے نکلا

    ہوا غرقاب شہر جاں تو یہ دل

    یہ دریا اپنی طغیانی سے نکلا

    جو نکلا شام دشت کربلا سے

    ستارہ خندہ پیشانی سے نکلا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY