غبار تنگ ذہنی صورت خنجر نکلتا ہے

فصیح اکمل

غبار تنگ ذہنی صورت خنجر نکلتا ہے

فصیح اکمل

MORE BYفصیح اکمل

    غبار تنگ ذہنی صورت خنجر نکلتا ہے

    ہماری بستیوں سے روز اک لشکر نکلتا ہے

    خدا جانے کہاں اس کی رفاقت ہو گئی زخمی

    کہ شب میں اک پرندہ چیختا اکثر نکلتا ہے

    متاع چشم حیراں کے سوا اب کچھ نہیں باقی

    دل آتش گرفتہ کا یہی جوہر نکلتا ہے

    لہو پی کر زمیں جب بھی نئی کروٹ بدلتی ہے

    کسی کا سر نکلتا ہے کسی کا گھر نکلتا ہے

    ہماری فتح کے انداز دنیا سے نرالے ہیں

    کہ پرچم کی جگہ نیزے پہ اپنا سر نکلتا ہے

    ہمارے شہر میں کم قامتوں کی بھیڑ ایسی ہے

    اسی کا قتل ہو جاتا ہے جس کا سر نکلتا ہے

    نظر والوں سے مت پوچھو حد امکاں کہاں تک ہے

    کہیں سورج نکلتا ہے کہیں منظر نکلتا ہے

    اگر جینے کی خواہش ہے جبیں سنگ آشنا رکھنا

    کہ ہر مخلص کی مٹھی میں یہاں خنجر نکلتا ہے

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    غبار تنگ ذہنی صورت خنجر نکلتا ہے فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY