گل پھینکے ہے اوروں کی طرف بلکہ ثمر بھی

محمد رفیع سودا

گل پھینکے ہے اوروں کی طرف بلکہ ثمر بھی

محمد رفیع سودا

MORE BY محمد رفیع سودا

    گل پھینکے ہے اوروں کی طرف بلکہ ثمر بھی

    اے خانہ بر انداز چمن کچھ تو ادھر بھی

    کیا ضد ہے مرے ساتھ خدا جانے وگرنہ

    کافی ہے تسلی کو مری ایک نظر بھی

    اے ابر قسم ہے تجھے رونے کی ہمارے

    تجھ چشم سے ٹپکا ہے کبھو لخت جگر بھی

    اے نالہ صد افسوس جواں مرنے پہ تیرے

    پایا نہ تنک دیکھنے تیں روئے اثر بھی

    کس ہستئ موہوم پہ نازاں ہے تو اے یار

    کچھ اپنے شب و روز کی ہے تج کو خبر بھی

    تنہا ترے ماتم میں نہیں شام سیہ پوش

    رہتا ہے سدا چاک گریبان سحر بھی

    سوداؔ تری فریاد سے آنکھوں میں کٹی رات

    آئی ہے سحر ہونے کو ٹک تو کہیں مر بھی

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    بیگم اختر

    بیگم اختر

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    گل پھینکے ہے اوروں کی طرف بلکہ ثمر بھی فصیح اکمل

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites