گزر چکا ہے جو لمحہ وہ ارتقا میں ہے

عاصم واسطی

گزر چکا ہے جو لمحہ وہ ارتقا میں ہے

عاصم واسطی

MORE BYعاصم واسطی

    گزر چکا ہے جو لمحہ وہ ارتقا میں ہے

    مری بقا کا سبب تو مری فنا میں ہے

    نہیں ہے شہر میں چہرہ کوئی تر و تازہ

    عجیب طرح کی آلودگی ہوا میں ہے

    ہر ایک جسم کسی زاویے سے عریاں ہے

    ہے ایک چاک جو موجود ہر قبا میں ہے

    غلط روی کو تری میں غلط سمجھتا ہوں

    یہ بے وفائی بھی شامل مری وفا میں ہے

    مرے گناہ میں پہلو ہے ایک نیکی کا

    جزا کا ایک حوالہ مری سزا میں ہے

    عجیب شور مچانے لگے ہیں سناٹے

    یہ کس طرح کی خموشی ہر اک صدا میں ہے

    سبب ہے ایک ہی میری ہر اک تمنا کا

    بس ایک نام ہے عاصمؔ کہ ہر دعا میں ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    گزر چکا ہے جو لمحہ وہ ارتقا میں ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY